سوال کا متن:

کيا مولا اميرالمومنين ص کا کوئي ايسا فرمان ہے ؟ " جو نہيں جانتا اور نہيں جانتا کہ وہ نہيں جانتا وہ بے وقوف ہے اس سے بچو ، جو نہيں جانتا اور جانتا ہے کہ وہ نہيں جانتا وہ جاہل ہے اسے سکھاو ، جو جانتا ہے اور نہيں جانتا کہ وہ جانتا ہے وہ سويا ہوا ہے اسے جگاو ، جو جانتا ہے اور جانتا ہے کہ وہ جانتا ہے وہ عقلمند ہے اس کي پيروي کرو "


وزیٹر کی تعداد: 286    گروپ کاری: علوم احادیث         
جواب:

ہميں اس بارے ميں جو روايت ملتي ہے، يوں ہے: ابن ابي جمہور احسائي نے اپني معتبر کتاب "عوالي اللئالي" ميں ايک امام معصوم (عليہ السلام) سے (ان امام عليہ السلام کے نام مبارک کا ذکر کئے بغير) نقل کرتے ہوئے لکھا ہے: اِنَّ النّاسَ أِرْبَعَةٌ: رَجُلٌ يَعْلَمُ و يَعْلَمُ اِنّهُ يَعْلَمُ فَذالِکَ مُرْشِدٌ عالمٌ فَاتَّبِعوُهُ. وَ رَجُلٌ يَعْلَمُ وَ لاَ يَعْلَمُ اِنَّهُ يُعْلَمُ فَذلِکَ غافِلٌ فَأَيَقْظِوُهُ. وَ رَجُلٌ لا يَعْلَمُ وَ يَعْلَمُ اِنَّهُ لا يَعْلَمُ فَذلکَ جاهِلٌ فَعَلِّمُوهُ وَ رَجُلٌ لا يَعْلَمُ وَلا يَعْلَمُ اِنَّهُ لا يَعْلَمُ فَذلِکَ ضالٌّ فَاَرْ شِدوُهُ.(1) لوگ چار قسموں پر مشتمل ہيں: ۱۔ ايسا شخص جو جانتا ہے اور اسے معلوم ہے کہ وہ جانتا ہے؛ پس يقيناً يہ شخص دانا اور ہدايت کرنے والا ہے اور اس کي پيروي لازمي ہے؛ ۲۔ ايسا شخص جو جانتا ہے ليکن اسے معلوم نہيں کہ وہ جانتا ہے؛ پس يقيناً وہ ايسا غافل ہے جسے جگانا ضروري ہے؛ ۳۔ وہ شخص جو نہيں جانتا اور اسے معلوم ہے کہ وہ نہيں جانتا، اسے تعليم دي جائے؛ ۴۔ وہ شخص جو نہيں جانتا اور اسے معلوم ہي نہيں ہے کہ وہ کچھ نہيں جانتا؛ پس ايسا شخص گمراہ ہے اور اس کي اصلاح کرني چاہيے۔


منابع اور مآخذ:

(1) ابن ابي جمہور الاحسائي، محمد بن علي بن ابراہيم؛ عوالي اللئالي؛ مدرسہ فقاہت ڈيجيٹل لائبريري، چوتھي جلد، صفحہ نمبر ۷۹ -------------------------------- www.abp-miftah.com گروه پاسخ‏گويي سايت پرسش و پاسخ پورتال اهل‏بيت (عليهم‏السلام)


فراہم کردہ جوابات لازمی طور پر عالمی اہل بیت ^ اسمبلی کی رائے کی عکاسی نہیں کرتے۔

نام
ایمیل
رائے